اے آر وائی زندگی بند، میڈیا ورکرز کیلیے زندگی تنگ: اے آر وائی لاہور سیلز کی سینئر مینجمینٹ بھی فارغ

0
2083

پاکستان میں دن بدن میڈیا کا بُحران سر اُٹھا رہا ہے، پہلے پہل تو میڈیا سے لوگوں کو نکالا جا رہا تھا لیکن اب بڑے بڑے بُرج اُلٹ رہے، اے آر وائی گرُوپ کے چینل اے آر وائی زندگی کے آپریشنز بند کر دیے گئے، تمام مُلازمین فارغ کر دیے گئے۔ تقریباً تمام اسٹیشنز سے زندگی پر کام کرنیوالوں پر زندگی تنگ کر دی گئی۔ پچھلے اڑتالیس گھنٹوں میں تقریباً ایک سو ستر لوگوں کو دو چینلز سے فارغ کیا گیا۔ ان مُلازمین کی آواز کون اُٹھائے گا؟ ان کیلیے نعرہ کون لگائے گا؟

کیا کاشف عباسی اس پ کوئی پروگرام کریگا؟ کیا ارشد شریف اپنی تحقیقی رپورٹنگ اس پر کریگا؟ کیا صابر شاکر ان مُلازمین کیساتھ یکجہتی دکھاتے ہوئے سلمان اقبال کو لائن پر لے گا۔ لیکن جواب نہیں میں ہو گا، کونسے کسی اینکر کی چھُٹی ہوئی ہے؟ کونسا کوئی ڈائریکٹر نیوز فارغ ہوا ہے،

لاھور سے میڈیا سیلز کے دو سینیئر ترین ایگزیکٹوز کو بھی لال جھنڈی دکھا دی گئی۔ سالہا سال سے اے آر وائی نیوز کی سیلز کی باگ دوڑ سنبھالنے والے ارشد علی کو بھی فارغ کر دیا گیا۔ اُنکے ساتھ ساتھ لاھور سے کیو ٹی وی اور زندگی کے سیلز ہیڈ، کاشف عباس کو بھی میڈیا کرائسس کی نظر کر دیا گیا۔ کاشف عباس ایک محنتی، مُخلص اور مُتحرک سیلز مین کے طور پر جانے جاتے ہیں، ان سینیئر لوگوں کی میڈیا سے چھُٹی ہونا کسی المیہ سے کم نہیں، میڈیا بائیٹس ٹینشن کی اس گھڑی میں فائر کیے گئے مُلازمین کیساتھ کھڑی ہے۔

۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here