عمران خان – مٌقدر کا سکندر؟

0
878

عمران خان – پاکستان کا نیا وزیر اعظم

پچھلے کُچھ دنوں سے جس طریقے سے عمران خان اور اُنکی جماعت کو مُخالفین کیطرف سے ہدف تنقید بنایا جا رہا ہے، اُسکی مثال شاید پاکستان میں پہلے کبھی ناں ملے۔ عمران خان نے ابھی حلف بھی نہیں اُٹھایا کے عمران خان کیخلاف نفرت کی آخری حدوں کو چھونے والے سوشل میڈیا اور میڈیا کے کُچھ مخصوص عناصر تنقید کے مُسلسل تیر برسا کر ہلکان ہوئے جا رہے ہیں۔
ایک بات سمجھ سے بالا کے نفرت کی یہ شدت آئی کہاں سے؟

اگر آپ تھوڑا سا تردد کریں تو آپکو پتا
چل جائیگا کے زیادہ غصے میں وہ لوگ ہیں جو پچھلے دس سالوں میں کسی ناں کسی طریقے سے مُسلم لیگی حکُومت سے فوائد اُٹھا رہے تھے، یا کوئی بزنس کا پہلو تھا۔ باقی تنقید اُن کی طرف سے جن کو عمران خان کے وجود سے ہی نفرت، اُنکی اس نفرت کا کوئی علاج نہیں وہ خود ہی نفرت کے ان دیوں میں جلتے رہیں گے۔

اللہ جسے چاہے عزت دے جسے چاہے ذلت دے۔ تو اگر اللہ تعالی کی طرف سے یہ لکھا جا چُکا کے عمران خان اگلے وزیر اعظم تو پھر یہ جلنا بھُننا جلی کٹی سُنا نے سے آپ اپنا ہی امیج نیچے گرائیں گے عمران خان کو الحمداللہ اس سے کُچھ نہیں ہو گا۔

بائیس سال کی لمبی محنت کیبعد عمران خان کو اسکے ثمرات مل رہے ہیں، جس جواںمردی سے اور بے خوف و خطر عمران خان نے اسٹیٹس کو کا مُقابلہ کیا، بڑے بڑے بُرج اُلٹے وہ کوئی آسان کام نہیں تھا۔
عمران ڈٹا رہا، عمران نے ہمت نہیں ہاری، عمران گرا نہیں،
بڑے بڑے سورماؤں نے اُسے گرانے کی ہر کوشش کر ڈالی، اُسکے خلاف فنڈنگ کیس کھُلے، اُس کی ذات پر غلیظ حملے کیے گئے، یہاں تک کے سابقہ بیوی سے کتاب تک لکھوائی گئی، لیکن خان مقدر کا سکندر ثابت ہوا۔

عمران خان کا فلسفہ رہا کے
تندہی باد مُخالف سے ناں گھبرا اے عقاب
یہ تو چلتی ہے تُجھے اونچا اُڑانے کیلیے

عمران کے چاہنے والوں نے بھی اُسے کبھی مایوس نہیں کیا، وہ تمام مُشکل حالات میں بھی خان کیساتھ سیسہ پلائی دیوار بنے کھڑے رہے، اور بالآخر سُرخرو ہوئے۔ عمران خان وزیر اعظم تو بن گئے، لیکن اصل امتحان آگے آنیوالا ہے۔ مضبوط اپوزیشن سے ڈر نہیں لگتا صاحب گندی اپوزیشن سے ڈر لگتا ہے۔

پاکستان کے مسائل بے شُمار ہیں، اب ان مسائل کے حل کیلیے ایک مضبوط اور کمپیٹینٹ ٹیم درکار، لیکن کپتان جانتا ہے کے ٹیم کو لیڈ کیسے کرنا ہے۔ کس کو کیا فرائض سونپنے ہیں۔

ہم دُعاگو ہیں کے عمران خان اس مُلک
کو اندھیری گلیوں سے نکال کر روشنیوں کے سمندر میں لے جائے۔ اللہ عمران خان کا حامی و ناصر رہے۔

تحریر: عمران ملک

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here