الیکشن 2018: پاکستان مُسلم لیگ لاھور کے ناراض اُمیدوار پارٹی سے بدلہ لینے کو بیتاب

0
1646

الیکشن 2018 کی کیمپیئنز زور و شور سے جاری، اُمیدوار ایک ایک ووٹ کیلیے سخت محنت کر رہے ہیں، جہاں ناراض ووٹرز کو منانے کیلیے اپنی تمام صلاحیتیں بروئے کار لا رہے ہیں، وہیں اپنی انا اور خود پرستی کو کُچھ عرصہ کیلیے کس سرد جگہ رکھ کر بھول گئے ہیں۔ ووٹرز کی کہی گئی ہر سخت سے سخت بات کو برداشت کر رہے ہیں۔

اسی مُشکل وقت میں اُنھیں پارٹی کے ناراض کارکُنان کی مُخالفت بہت زیادہ تنگ کر رہی ہے۔ ٹکٹوں کی تقسیم کے وقت پیدا ہونے والے اختلافات اب قد آور درخت بن چُکے، بہت سے کارکُنان اپنی ہی پارٹی کے امُیدواران کیخلاف الیکشن لڑ رہے ہیں۔ اور جب مُقابلے کی فضا سخت ہو تو پارٹی کے امُیدواران کیلے پارٹی سے ناراض آزاد اُمیدوار کسی ڈراؤنے خواب سے کم نہیں ۔


مُحترمہ فرزانہ بٹ مُسلم لیگ کی پُرانی کارکُن اور تیس سال سے اچھے بُرے وقت میں پارٹی کیساتھ ہمیشہ کھڑی رہیں، خواتین کی مخصوص نشستوں پر پچھلی دفعہ ایم پی اے مُنٹخب ہوئیں، پارٹی کیطرف سے مخصوص پارٹی لیڈرز کو موازنے کیوجہ سے فرزانہ بٹ مخصوص نشست کے کوٹے سے ٹکٹ حاصل ناں کر سکیں جسکی وجہ سے اب وہ حلقہ 129 میں ایاز صادق کے مُخالف کھڑی ہیں، سردار ایاز صادق نے اُنھیں اپنے حق میں دستبردار کرنیکی بڑی کوشش کی لیکن وہ ڈٹی ہیں کے وہ کسی بھی صُورت میں ایاز صادق کے حق میں الیکشن سے دستبردار نہیں ہونگی

مُشرف کیخلاف جیل کاٹی، سردی، گرمی، کوئی بھی موسم ہو فرزانہ بٹ چٹان بن کر اپنے لیڈر کی حمایت میں کھڑی رہیں۔ اسمبلی کے اندر یا اسمبلی کے باہر فرزانہ بٹ نے ثابت کیا کے پارٹی کمٹمینٹ کیا ہوتی ہے۔ لیکن پارٹی میں امیر پیرا شوٹ گروپ کی آمد کی وجہ سے حقیقی کارکُنان کو نکال باہر کیا گیا، گو فرزانہ بٹ جیت تو نہیں پائیں گی لیکن مُسلم لیگ کے ووٹ کو ڈینٹ ضرور ڈالیں گی۔

دُوسرے اُمیدوار جنہوں نے کلمہ شہادت بُلند کیا وہ ضعیم قادری ہیں جنہوں نے حمزہ شہباز کی سلطنت کو للکارا اور اُنھیں بادشاہ ماننے سے انکار کر دیا، ضعیم قادری نے پانچ سال بڑی جانفشانی اور صبروتحمل کیساتھ پنجاب اور وفاقی حکومتوں کو میڈیا میں ڈیفینڈ کیا۔ وہ چاہتے تھے کے اُنکو قومی اسمبلی میں اس دفعہ قسمت آزمائی کا موقعہ دیا جائے لیکن وحید عالم خان سابقہ رُکن قومی اسمبلی کو اُن پر فوقیت دی گئی، دوسرا اُنھیں شاید پتا نہیں کے حمزہ شہباز سے سیٹ کیسے لی جاتی ہے، جب اُنھیں مُسلسل دیوار کیساتھ لگایا گیا تو وہ پھٹ پڑے، اور مُسلم لیگ کو خیر باد کہہ گئے، لیکن جاتے جاتے حمزہ شہباز کی رعُونت کو ایکسپوز کر گئے۔

جسکی بازگشت کافی دنوں تک میڈیا میں سُنی گئی۔ اب ضعیم قادری حلقہ این اے 133 سے الیکشن لڑ رہے ہیں، اُنکے مُقابلے میں مُسلم لیگ ن کے صدر پرویز ملک الیکشن لڑ رہے ہیں۔ یہی اُنکے سب سے بڑے ناقد تھے، اُنھیں مزہبی جماعتوں کی حمایت حاصل ہے اور اُمید کرتے ہیں کے پندرہ سے بیس ہزار ووٹ لے سکتے ہیں، اسکا فائدہ پی ٹی آئی کے اُمیدوار اعجاز چوھدری کو کو سکتا ہے!

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here