حلقہ 127 لاھور: مریم نواز شریف کیلیے لاھور سے محفوظ ترین اور پی ٹی آئی کیلیے مُشکل ترین حلقہ

0
4795

الیکشن کی آمد آمد ھے، سیاسی جماعتیں بڑی باریک بینی کیساتھ اُمیدواروں کی تلاش میں ہیں، ہر پارٹی کی خواہش ہے کے وہ مضبوط ترین اُمیدوار میدان میں اُتاریں اُسکے لیے ایک تھکا دینے والی مشق جاری ھے۔
تحریک انصاف نے کل اپنی قومی اسمبلی کیلئے اُمیدواروں کی لسٹ جاری کر دی ہے جس پر میڈیا کے علاوہ پارٹی لیول پر بھی بحث جاری ھے۔
لاھور کیلیے پی ٹی آئی نے ایک مضبوط پینل اُتارا ھے، تاریخی حلقہ 125 جہاں سے مُحترمہ کلثوم نواز نے ضمنی الیکشن جیتا تھا وہاں سے مریم نواز شریف کے الیکشن لڑنے کی باتیں گردش میں تھیں کیونکہ یہ حلقہ میاں نواز شریف کا آبائی حلقہ ھے۔
ضمنی الیکشن میں مُسلم لیگ ن حکومت میں ہونے کے باوجود اُس مارجن سے نہیں جیت سکی جسکی اُن سے اُمید کی جا رہی تھی،
چونکہ یہ مریم نواز کا عملی سیاست میں پہلا قدم ھے لہذا کوشش یہ ہو گی کے وہ لاھور کے کسی ایسے حلقے سے الیکشن لڑیں جہاں مُقابلہ نسبتا آسان ہو اور جیتنے کا مارجن بڑا ہو۔
اسی لیے مریم نواز نے حلقہ 127 کا بھی انتخاب کیا ھے۔ اس حلقے سے

پچھلے الیکشن میں روحیل اصغر ایک بڑے مارجن کیساتھ جیتے تھے، اور تقریباً 120,000 ووٹ حاصل کیے تھے۔ یہ حلقہ پی ٹی آئی کا ایک کمزور ترین حلقہ ھے اور مُسلم لیگ کا ایک مضبوط ترین حلقہ ھے۔
یہ حلقہ مُحترمہ مریم نواز شریف کے لیے ایک آسان حلقہ ثابت ہو گا اور اُنکے مُقابلے میں ایک نئے اُمیدوار جمشید چیمہ پی ٹی آئی کیطرف سے اُمیدوار ہیں۔

اس حلقے سے صوبائی حلقے سے روحیل اصغر کو قربانی دینے کے عوض اُنکے بیٹے خُرم روحیل اصغر کو ٹکٹ مل سکتا ہے۔ جو ایک مُتحرک مضبوط اُمیدوار ثابت ہو سکتے ہیں۔ اسی قومی کے دوسرے حلقے سے ایک اور نوجوان راشد علی بھٹی نے بھی کاغذات نامزدگی جمع کروائے ہیں جو ایک بڑا اثاثہ ہو سکتے ہیں لیکن سابقہ ایم پی اے وحید گُل شاید راشد بھٹی کو آگے ناں آنے دیں

پچھلے الیکشن میں روحیل اصغر کے مُقابلے میں چوہدری اعتزاز احسن کی اہلیہ بُشری اعتزاز پی پی پی کیطرف سے جبکہ علامہ اقبال کے نواسے بیرسٹر ولید اقبال پی ٹی آئی کیطرف سے اُمیدوار تھے۔ روحیل اصغر کے 119,200 ووٹوں کے مُقابلے میں ولید اقبال نے پی ٹی آئی کیطرف سے 42,200 اور بُشری اعتزاز نے پی پی پی کیطرف سے 7,000 ووٹ حاصل کیے۔ اور جیت کا مارجن تقریباً 50,000 تک کا تھا۔

اس شمالی لاھور کے حلقے کی مشہور علاقوں میں مُغلپورہ، فتح گڑھ، داروغہ والا، انگوری باغ، ڈرائی پورٹ، غازی آباد، ہربنس پورہ، لاریکس کالونی، مومن پورہ، دھرم پورہ سلامت پورہ اور تاج پورہ کے علاقے شامل ہیں۔

 

 

تجزیہ: عمران ملک

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here