ڈاکٹر عامر لیاقت پر 30 روزہ پابندی: بول رمضان ٹرانشمشن اور میڈیا ہاؤسز کو بڑا جھٹکا؟

0
108

آخر عامر لیاقت حُسین چاہتے کیا ہیں؟
ایک دفعہ پھر عامر لیاقت خبروں میں ہیں، اپنے پروگرام میں جسطرح سے اُنھوں نے مذہب کو اساس بنا کر ایک ہنگامہ کھڑا کیا اُس سے شاید اُنھوں ٹی وی ریٹنگز پر تو ڈاکہ ڈال لیا ہو لیکن اب عوام سمجھدار ہو چُکی وہ عوام کو بالکُل بھی مُتاثر نہیں کر سکے اور اُنھوں نے ایک مرتبہ پھر لوگوں کی مُخالفت اور نفرت ہی مول لی ھے۔

جیو نیوز سے عالم آن لائن کے ذریعے شُہرت کی بُلند یوں کو چھُو لینے والے عامر لیاقت اب ناکامیوں کے گہرے اندھیروں میں کہیں گُم ہو گئے۔
وفاقی وزیر مذہبی امور کے عُہدے پر بھی براجُمان رہے، ایم کیو ایم میں ایک مُعتبر سیاستدان کے حوالے سے بھی پہچانے گئے۔ لیکن جب سے جیو عالم لائن سے علیحدہ ہوئے عامر لیاقت سیٹل نہیں ہو پائے، ایکسپریس گئے، بول نیوز گئے، 24 نیوز گئے اور پھر دوبارہ بول نیوز کو جوائن کر لیا، پھر پیمرا اُنکے پیچھے بات سُپریم کورٹ تک جا پہنچی لیکن عامر لیاقت اپنے مُتنازعہ رویوں سے آئے دن خبروں میں ہوتے ہیں، کیا عامر لیاقت نرگسیت کا شکار ہیں؟ nکیا عامر لیاقت سمجھتے ہیں کے وہ عقل کُل ہیں؟ کیا عامر لیاقت سمجھتے ہیں کے جتنا وہ مُتنازعہ ہونگے اُتنا ہی وہ مقبول ہونگے؟ اب اُنھیں سوچنا ہو گا کے وہ سیاست میں نام بنانا چاہتے ہیں؟ وہ پی ٹی آئی جوائن کر چُکے، اور اگلا الیکشن لڑنے کا عندیہ بھی دے چُکے کیا اسطرح کے حربے اُنکے ووٹرز کو مُتاثر کر پائینگے۔ کیا لوگ اُنکو ایک سیریس سیاستدان کے طور قبُول کر پائینگے؟ ابھی پیمرا نے اُن پر مذہبی جزبات اُبھارنے پر ایک ماہ کی پابندی عائد کی ھے، ویڈیو لنک دیکھنے کے بعد احساس ہوا کے اُنھوں نے جان بوجھ کر اس مذہبی تنازع کو بڑھاوا دیا، اُنھیں پتا ہونا چاہیے تھا وہ ایک سینیئر اینکر ہیں اور ذمہ دارانہ پروگرامنگ اُنکا بُنیادی اصول ہونا چاہیے لیکن شائد عامر لیاقت سمجھتے ہیں کے اصولوں کو توڑ کر ہی مقبولیت حاصل کی جا سکتی ھے۔ جس پر اُنھیں اترانے کی بجائے افسوس کرنا چاہیے۔

یاد رہے رمضان المُبارک سے کُچھ عرصہ پہلے 24 نیوز کو اعتماد میں لیے بغیر اُنھوں نے بول نیوز کو جوائن کر لیا جس پر 24 نیوز کی مینیجمینٹ اُن سے نا خوش تھی۔

اب عامر لیاقت پر پابندی لگنے کیوجہ سے بول نیوز مُشکلات کا شکار ہو سکتا ھے کیونکہ میڈیا بائنگ ہاؤسز نے بول کی رمضان ٹرانسمیشن کو کڑوروں روپے میں خریدا ھے، عامر لیاقت پر پابندی بول کے کلائینٹس کیلیے کسی بڑے جھٹکے سے کم نہیں

ابھی صرف رمضان کا پہلا عشرہ ہی گُزرا ھے دو عشروں میں اب بول نیوز کیلیے بڑا چیلینج ہو گا کے وہ عامر لیاقت حُسین کی کمی کو کیسے پُورا کرتے ہیں۔
اب بول کو سوچنا ہو گا کے اب اُنکا پروگرام ‘ایسے نہیں چلیگا’ واقعی ایسے نہیں چلے گا، اسکے لیے کوئی خاتون اینکر کو ٹرانسمیشن میں بطور میزبان لانا چاہیے۔جن میڈیا بائنگ ہاؤسز نے بول کیساتھ ڈیل کی ھے اُنکو یقیننا اب دُوسرے چھوٹے چینلز پر بجٹ مُنتقل کرنا پڑیگا جو واقعی چھوٹے چینلز کیلیے کسی معجزے سے کم نہیں

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here