یونی لیور نے گوُگل اور فیس بُک سے ایڈورٹائزنگ ختم کرنیکے لیے وارننگ دیدی

0
321

دُنیا کا بڑا اور اپنے مشہور برانڈز ڈو، لپٹن، سرف کیوجہ سے مشہور ملٹی نیشنل یونی لیورز نے گُوگل اور فیس بُک پر اپنی ڈیجیٹل ایڈورٹائزنگ ختم کرنیکا اشارہ دیا ھے، یونی لیورز کے ڈائریکٹر مارکیٹنگ کا ایک انٹرویو میں کہنا تھا کے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جھوٹی خبروں، انتہا پسندی، نسل پرست خبروں اور جنس پرست خبروں کی آماجگاہ بن چُکا ھے۔
 کسی بھی خبر پر کوئی چیک نہیں ھے، کوئی بھی کسی بھی وقت کوئی خبر ان سوشل میڈیا ز پر شیئر کرسکتاھے اور کوئی بھی ان خبروں کو روک نہیں سکتا۔


 یونی لیور نہیں چاہے گا کے اس کے مشہور برانڈز کا اشتہار ان جھوٹی خبروں کے درمیان لگے، اس سے اُنکے برانڈز کا امیج خراب ہو رہا ھے۔
یونی لیور مارکیٹنگ ہیڈ کیتھ ویڈ کا کہنا تھا کے سوشل میڈیا پر قابل اعتراض مواد کو روکنے کا کوئی قابل اثر میکانزم نہیں ھے، خاص طور پر بچوں کو اس قابل اعتراض مواد دیکھنے سے روکنے کیلیے کوئی ٹُول بھی نہیں ھے۔
 اُن کا مزید کہنا تھا کے ایسی ایسی جھوٹی خبریں اور قابل اعتراض مواد شیئر کیا جاتا ھے جسکی وجہ سے لوگوں کا سوشل میڈیا پر سے اعتماد اُٹھ رہا ھے، یہاں تک کے یہ مُختلف مُلکوں کی جمہوریتوں کیلیے بھی خطرہ بن رہے ہیں۔


 ھم سمجھتے ہیں کے یہ کوئی ایسی بات نہیں جسکو نظر انداز کیا جا سکے، ھمارے لیے ھمارے کنزیومرز بہت اھم ہیں، اور ھم نہیں چاھتے کے ھمارے برانڈز ان سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کو پروموٹ کر رہے ہوں۔
ھم اُن سوشل میڈیا سائیٹس پر بالکُل ایڈورٹائز نہیں کرینگے جو معاشرے کو تقسیم کریں اور ھماری نوجوان نسل کو غلط راہ پر ڈالیں۔
فیس بُک اور گوگل دُنیا میں لوگوں تک پہنچنے کا زبردست میڈیم ھے، اور پوری دُنیا میں سب سے زیادہ استعمال ہونیوالے ڈیجیٹل میڈیم ہیں،

سن 2017 میں گوگل اور فیس بُک پر ٹوٹل ڈیجیٹل ایڈورٹائزنگ کا تقریباً ساٹھ فیصد صرف ان دو سائیٹس پر صرف کیا گیا۔
فیک نیوز اور قابل اعتراض مواد کی اشاعت کیوجہ سے ایڈورٹائزر پہلے ہی ایک مُشکل صورتحال کا سامنا کر رہے ہیں۔ بہت سی کمپنیوں نے پہلے ہی گوگل پر اشتہارات دینا بند کر دیے ہیں اور اسکی بڑی وجہ گوگل کے یو ٹیوب چینل پر قابل اعتراض ویڈیوز کا چلنا تھا۔


 فیس بُک بھی کُچھ عرصہ سے کوشش میں ھے کے مُختلف فلٹرز لگا کر فیک نیوز اور قابل اعتراض مواد پر پابندی لگائی جا سکے۔
فیس بُک کے نمائندے کا کہنا تھا کے وائرل ویڈیوز کے فیس بُک پر چلنے پر ھمارے ناظرین نے سخت نا پسندیدگی کا اظہار کیا ھے۔ اور وہ فیس بُک کو چھوڑ رہے ہیں۔


 یاد رہے یونی لیورز کا سالانہ ایڈورٹائزنگ کا بجٹ تقریباً 95 ارب روپے ہے، جسمیں  ڈیجیٹل ایڈورٹائزنگ کا بجٹ 24 ارب روپے ھے۔

end

Mediabites Editorial – Shoaib Naqvi

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here