کلثوم نواز ان، شہباز شریف آؤٹ

0
101

میاں نواز شریف کی عدالت سے پارٹی صدارت سے نااہلی کی بعد سیاسی حلقوں میں یہ بات زیر گردش کر رہی تھی کے میاں شہباز شریف کو مُسلم لیگ ن کا اگلا صدر بنایا جائیگا۔
لیکن کُچھ حلقوں کا کہنا تھا کے شہباز شریف کو منایا جا رہا ھے کے مریم نواز شریف کو پارٹی کا اگلا صدر بنا دیا جائے۔ لیکن شہباز شریف کا قرعہ شاید صدارت کیلیے نہیں نکلے گا، چونکہ مریم نواز شریف پچھلے کُچھ عرصے میں اُبھر کر آگے آئی ہیں اور اپنے گرد مُسلم لیگ ن کا ایک مضبوط گروپ بنانے میں کامیاب بھی ہو گئیں ہیں لہذا وہ بھی خواہش رکھتی ہیں کے اُنھیں کوئی بڑی ذمہ داری سونپی جائے۔


شہباز شریف اور اُنکے گروپ کا خیال یہی تھا کے میاں نواز شریف، میاں شہباز شریف کے کیے گئے ترقیاتی کاموں اور شب و روز کی محنت کیوجہ سے اُنھیں ہی صدارت کیلیے نامزد کرینگے لیکن مُسلم لیگ گروپ میں موجود ہاکس گروپ جو مریم نواز کی اے ٹیم ھے وہ ایک دفعہ پھر کامیاب ہو گئی ھے۔
پہلے اس گروپ نے شہباز شریف کے قریبی ساتھی اور سابقہ وزیر داخلہ چوھدری نثار علی خان کی چھُٹی کروائی اور اب ایک سمارٹ چال سے شہباز شریف کو بھی صدارت کی دوڑ سے آؤٹ کر دیا ھے۔

پنجاب ہاؤس میں ایک طویل میٹنگ کیبعد یہ فیصلہ کیا گیا، پنجاب ہاؤس میں تمام وہ لوگ موجود تھے جو مریم نواز کو پارٹی کا اگلا سربراہ دیکھنا چاہتے ہیں اور پچھلے کافی عرصہ سے مریم نواز کے آگے پیچھے ہوتے ہیں اور کھُل کر مریم نواز کی حمایت کرتے ہیں۔

زرائع کا کہنا ھے کے طویل میٹنگ میں میاں نواز شریف صرف دس منٹ کیلیے بولے باقی وقت وہ حکومتی وزراء اور پارٹی لیڈران کی رائے لیتے رہے، اکثریت کا فیصلہ تھا کے خادم اعلی پنجاب کی بجائے کلثوم نواز کو پارٹی کا سربراہ بنا دیا جائے۔ اسطرح کنٹرول مریم نواز کے ہاتھ میں ہی رہیگا۔ جسطرح حلقہ 120 میں کلثوم نواز بیماری کیوجہ سے علامتی ایم این اے ہیں اور اصل ایم این اے مریم نواز ہی ہیں۔

end

Mediabites Editorial – Blog by Imran Malik (Via Dawn Sources)

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here